Tuesday, November 20, 2018
Home > بین الاقوامی > چین نے ڈیڑھ لاکھ فوجی شمالی کوریا کے بارڈر پر تعنیات کر دئیے۔

چین نے ڈیڑھ لاکھ فوجی شمالی کوریا کے بارڈر پر تعنیات کر دئیے۔

نیوزڈیسک(آوازپوائنٹ): امریکہ اور جنوبی کوریا تو شمالی کوریا کے خلاف جنگی کارروائی کرنے کا ارادہ کر چکے ہیں  مگر اب چین بھی میدان میں آ گیا ہے جس سے جنگ کا خطرہ مزید بڑھ گیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق چین نے ڈیڑھ لاکھ فوجی شمالی کوریا کے بارڈر پر تعینات کر دیئے ہیں۔ اس کی وجہ یہ بیان کی جا رہی ہے کہ امریکہ اور جنوبی کوریا کے شمالی کوریا پر حملے کی صورت شمالی کوریا سے لوگ بڑی تعداد میں ہجرت کریں گے اور ان کی پہلی منزل چین ہو گی۔ لہٰذا چین نے ان مہاجرین سے نمٹنے کے لیے اتنی بڑی تعداد میں بارڈر پر فوجی تعینات کیے ہیں تاکہ مہاجرین کے اس مسلے پر کنٹرول کیا جاسکے اور کسی بھی قسم کی جارحیت سے نمٹا جا سکے۔

 دفاعی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اب ڈونلڈٹرمپ شمالی کوریا پر حملے کا حکم دے سکتے ہیں۔چین کی طرف سے شمالی کوریا کے بارڈر پر جو فوجی تعینات کیے گئے ہیں ان میں میڈیکل اور بیک اپ یونٹ بھی شامل ہیں۔

واضح رہے کہ امریکی نیوی اپنا لڑاکا طیاروں کا حامل جنگی بحری بیڑہ’یو ایس ایس کارل ونسن‘ سنگاپور سے شمالی کوریا کے پانیوں کی طرف روانہ کر چکی ہے۔ اس بیڑے کو رواں ہفتے آسٹریلیا جانا تھا لیکن وہ دورہ منسوخ کرکے اسے شمالی کوریا کی طرف بھیجا گیا ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اب امریکہ شمالی کوریا پر حملہ کرنے کا فیصلہ کر چکا ہے۔

اگر امریکہ نے شمالی کوریا نے پر حملہ کیا تو شمالی کوریا اپنے دفاع میں ایٹمی ہتھیاروں کا بھی استعمال کر سکتا ہے جو خاصا سنگین مسلہ ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *