Monday, October 22, 2018
Home > ادب > عظیم شاعر جوش ملیح آبادی کو ہم سے بچھڑے35برس بیت گئے۔۔۔۔۔۔۔

عظیم شاعر جوش ملیح آبادی کو ہم سے بچھڑے35برس بیت گئے۔۔۔۔۔۔۔

ادب ڈیسک آواز پوائنٹ:کسی بھی معاشرے میں جہاں افراد سماجی ناانصافیوں کا شکار ہوں وہاں سب سے پہلے ادبی طبقہ بیدار ہوتا ہے.ہندوستان میں برطانوی حکومت کے خلاف برصغیر کے عوام کو بیدار کرنے کے حوالے سے جنوبی ایشیاء سے جڑی ادبی شخصیات نے بھی 19 ویں صدی کے اختتام اور 20 ویں صدی کے ابتدائی عرصے میں اہم تاریخی کردار ادا کیا۔انہی شخصیات میں پاک و ہند کے معروف انقلابی شاعر جوش ملیح آبادی کا نام انتہائی اہم ہے جنہوں نے ہندوستان میں برطانوی راج کے خلاف تحریکِ آزادی کو فروغ دینے میں اپنی نظریاتی شاعری کے ذریعے اہم کردار ادا کیا۔بیسویں صدی کے وسط سے لے کر اب تک شاید ہی کوئی ایسا شاعر یا دانشور ہو جو جوشؔ ملیح آبادی کی شاعری سے متاثر نہ ہوا ہو.جوش نے ہندوستانی معاشرے کے سلگتے ہوئے سماجی مسائل پر انتہائی بے باکی سے اپنے خیالات کا اظہار کیا، کبھی وہ بھوک اور افلاس کی مذمت کرتے ہیں تو کبھی ظالم حکمرانوں کو للکارتے ہیں اور کبھی عوامی فکری جمود پر شکوہ کرتے ہیں۔

جس دیس میں آباد ہوں بھوکے انسان
احساسِ لطیف کا وہاں کیا امکان
اِک فکرِ معاش پر نچھاور سو عشق
اک نانِ جویں پہ لاکھ مکھڑے قربان

موجودہ پاکستانی معاشرے میں جو سیاسی اور معاشرتی خلفشار کی ایک جامع تصویر ہے نہ صرف اقبال کے تصوّرِِ اجتہاد بلکہ جوش ملیح آبادی کے احترامِ آدمیت اور سیاسی بیداری پر مبنی انقلابی افکار کو بھی فروغ دینے کی ضرورت ہے تاکہ معاشرہ بیداری کی اُس نہج پر پہنچ جائے جہاں سے معاشرتی ارتقاء کے چشمے پھوٹنا شروع ہوتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *