Tuesday, November 20, 2018
Home > کھیل > کرکٹ > ٹیسٹ کرکٹ میں سفید لباس ہی کیوں پہنا جاتا ہے؟

ٹیسٹ کرکٹ میں سفید لباس ہی کیوں پہنا جاتا ہے؟

سپورٹس ڈیسک (آواز پوائنٹ):کرکٹ دنیا کے مشہور کھیلوں میں شمار ہوتا ہے، ابتدا میں ٹیسٹ کرکٹ اور بعد ازاں ون ڈے کرکٹ کا آغاز ہوا لیکن وقت جس تیزی سے گزر رہا ہے کرکٹ کے پنڈتوں نے ٹی ٹونٹی کرکٹ کا آغاز کردیا۔ کیا آپ نے سوچا ہے کہ ون ڈے اور ٹی ٹونٹی میچوں میں تو کھلاڑی رنگا رنگ لباس پہنتے ہیں لیکن ٹیسٹ کرکٹ میں سفید لباس ہی کیوں پہنا جاتا ہے؟
کرکٹ کا آغاز سولہویں صدی عیسویں سے ہوا۔ اس سپورٹس کو جینٹل مینوں کا کھیل بھی کہا جاتا ہے۔ کرکٹ کھیلنے والے تمام ممالک کے کھلاڑی ون ڈے اور ٹی ٹونٹی میچوں میں رنگا رنگ لباس پہن کر میدان میں اترتے ہیں، لیکن صدیاں گزر گئیں آج بھی ٹیسٹ میچوں میں سفید لباس ہی رائج ہے۔لیکن ایسا کیوں کیا جاتا ہے اس راز سے بھی بالاخر پردہ اٹھ گیا ہے۔
تاریخ پر نظر دوڑائی جائے تو ہمیں پتہ چلتا ہے کہ اٹھارہویں صدی عیسوی تک کرکٹ برطانیہ کا قومی کھیل بن چکا تھا۔ اس دور میں ایسے میٹریل کا استعمال کیا جاتا جو آسانی سے دستیاب ہو چونکہ سفید لباس آسانی سے دستیاب تھا اس لیے اس انتخاب عملی تھا۔ اس کے علاوہ یہ کھیل صرف برطانیہ کے امراءاور اعلیٰ طبقے کے لوگ کھیلتے تھے جو نفاست کے اظہار کیلئے سفید لباس پہنتے۔ 19 ویں صدی میں سفید لباد کرکٹ کا یونیفارم بن گیا۔19ویں صدی سے رائج سفید یونیفارم کو آج تک کسی نے بدلنے کی کوشش نہیں کی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *